Punjabi Wichaar
کلاسک
وچار پڑھن لئی فونٹ ڈاؤن لوڈ کرو Preview Chanel
    



مُڈھلا ورقہ >> شاہ مُکھی وچار >> پروفیسر سعید بُھٹا >> کمال کہانی >> نور، کندر دا سپرا

نور، کندر دا سپرا

سعید بُھٹا
May 20th, 2008
5 / 5 (1 Votes)

    نُور، کندر دا سِپرا مالکیاں دے وچ ہویا ہے۔ ایہہ مالکے سِپرا سدیندِن۔ آہدِن: ایہہ کندر دا پُتر ہے۔ کندر نوں اوس ایلے کندری سدیندے ہان۔ ساک کسے سِپرا نہ دتا۔ پٹھانی ہک مُل لَے کے کندر نوں دِتیانیں۔ ایہہ پٹھانی دے وِچوں ہے نُورا۔ نُورا وڈیرڑا ہو پیا۔ دوآہنے دے وچ ایّڑ بہایا ہویا ہے کندر۔ نُورے نوں وی نال لے جاندا ہے پیار تُوں۔ جھڑی لہہ پئی پوہ دی۔ اوہ اودائیں ڈھپر دے وِچ ہے۔ پٹھانی نہ اپڑی ٹُکر لَے کے۔ خیال آیا ہے کندر نوں بھئی چھوہُر بھُکھا بیٹھا ہے۔میں ایہناں دی جڑھ کڈھنی ہے۔ اوس بھیڈ چاں کُٹھی چنگی ہِک بھئی ودھدی گھر لئی ویسائیں۔ نُورے نوں کھواون لگ پیا ہے۔ اوہا مُڑ اوجھری شوجھری تے سِری کھراوڑے آن بچے۔ فجر کندر آکھیا، ''جے ایہہ لائق ہویا تاں ایس جیڈا لائق کوئی نہیں ہوونا۔ جے بھَیڑ ہویا تاں ایس جیڈا بھَیڑ وی کوئی نہیں ہوونا۔ ایس ایہہ ایہہ کار کیتی ہے۔''

    ہمیشاں نُور سِپرا نوں پیو دسیندا ہا:مجھ اساڈی ہا ہِکا، اوہ سعی کے ہرلاں لُکا لئی ہائی۔ ناہنے دِتی۔ نُورا گبھرو ہو گیا۔ نُورے چاں تکے سعی کے ہرل۔ ہکلے۔ چاننی رات ہائی۔ سعی کے گھر جا سوندے ہان۔اوہناں نوں یقین ہائی اسانوں کون لُکدا ہے۔ مَجھ ہِک چوٹی دی ہائی۔ اوہ نُورے چِک لئی۔ نُورا جیہڑے ایلے اوبھاناں آلے سنّھ تے آیا ہے، من دریا دی تے وگیا آوندا ہا، شیِنہہ بُکے۔ مجھ ترٹھی۔ مجھ دا سنِگ نپ لیوس۔ سجے ہتھوں آ کے شیر حملہ کیتا ہے۔ ایس اِنج تلوار ماری وِچوں تردی نِکل گئی۔ مجھ کُھبھ گئی۔ تڈ ماریاں مجھ کڈھی۔ فجر کُوکاں وگ گئیاں۔ بندیاں آکھیا: کون ہووے جیہڑا سعی کیاں نوں لُک پیا ہے۔ کھوجیاں آکھیا، ''کون نہ آکھو۔ ایہہ شِینہہ ماریا پیا ہے۔ مجھ کُھبھی کھلی ہکلیاں کڈھی سُوں۔'' ہرل بولیا، اوس آکھیا، ''بھائی ! ہر کوئی وگ جاؤ۔ کھوجی ٹُرو بھئی بندہ ویکھنا ہے۔ مجھ میں اوہنوں ماف کر چھڈی ہے۔'' کُھرا آن گھتیونیں سِپراواں نوں۔ نہ اگانہہ نکلے نہ پچھانہہ۔ سِپراواں نوں اکھیو نیں: مجھ ہے تُہاتھے۔ اوہناں آکھیا، ''اساڈی جُرات توں کم باہر ہے۔ اساں سعی کیاں نوں لُکنا۔'' اوہناں آکھیا، ''مُڑہامو۔'' بابا ہامن آلا کوئی بن گیا۔ نورا ایّڑ نال ہا۔ اوس لیاندا ایّڑ۔ اوس آکھیا ''بابا! مجھ ہامیں نہیں۔ مجھ میتھے ہے۔'' پیو گتکالے کے وگیوس، ''سعی کیاں نوں؟''اوس آکھیا، ''او مارکا! جے سجے ہتھیں شینہہ ماریا پیا ہے تے کھبے ہتھ مجھ کُھبھی کھلی ہے تاں چور کون ہے؟'' اکھے، '' تُوں۔'' تاں ہرل آکھیا، ''مجھ تینوں بخشی۔'' ایتھوں نُورا نُورا ہو گئی۔

نُورا وت اکیہویں بھیڑ اِچ ماریا ہے۔ بلا ایڈی ہویا ہے گھوڑی آلے دھاکے آئن، جَن بھراونا۔ اگوں بھٹی نِکل آئن۔ بھٹیاں بندوقاں وگائیاں۔ بندوق جَن آلوں ہائی کائی نہ ۔ دھاڑ چل پئی۔ گودھے ماچھی بندوق سِدّھی کیتی ہے۔ راء حشمت بھٹی پُچھیا ہے، ''کیہنوں وگاؤ ہیں؟'' اکھے، ''سارے بھنّے دھروڑیں جاندِن۔ اوہ بندہ ون نال کھلا ہے۔'' اکھے، ''نہ وگا۔'' ''کیوں؟'' ''ڈِٹھا ہویا میں نہیں۔ ایہہ نور، کندر دا ہوونا ہے، جیہڑا وسدیاں بندوقاں دے ہیٹھ کھلاہے۔'' اوس آکھیا ' ''اسانوں بھاجی گھتِن آیا ہے؟ میں وگاونی ہے۔'' راء حشمت بھنا ہے اوس آ کے موہری پٹ لئی۔ سد کے پُچھیا ہے: مہر نُور ہیں؟ اکھے، ''ہا۔ راء حشمت، نُور ہاں۔'' حشمت آکھیا، ''توہیں تاں مینوں ڈِٹھا ہویا کوئی نہیں۔ تینوں کاہیں دسیا ہے؟'' اوس آکھیا، ''توہیں وی تاں مینوں نہیں ڈِٹھا ہویا۔ تینوں کاہیں دسیا ہے؟'' اکھے، ''تیری مثال ہے بھئی کنڈ نہیں دیندا۔''اوس آکھیا، ''تیری وی مثال ہے میں سُنیا ہویا ہے حشمت، دانے دا لڑائی دے وچ حقا ہِک ہتھ دے وچ ہوندا ہے۔ ہِک ہتھ نال لڑدا ہے۔ـ'' حشمت آکھیا، ''وگ جا کجھ نیہسے آہدے۔'' نُورے آکھیا، ''پوند ویسو تاں ویساں۔ اِنج میرا چلن بندا ہے۔'' اوس آکھیا، ''گڑا پَوی اسیں گھر کھلے ہویاسے۔ اسیں کِدے ونجیے؟'' اکھے' ''راء جی جتھے راٹھاں دے متھے بِک جاون، ہردا گھر ہوندا ہے۔ اوہ جیہڑے بھنّے جاندِن، ایہہ تاں کوئی نہیں پیا آہدا نِمانے پردیسی ہائن۔ ہر کوئی ویہدا پیاہے بھئی چلے ویندِن۔ پوند ویسو تاں ویساں۔ نہیں تاں کھلا ہاں۔'' اوس ویلے راء حشمت پگڑی لاہ کے سٹی ہے اکھے، ''سلاری اوہراں سٹ۔''پگڑے وٹائن۔ اکھے، ''آ ہُن راتیں ایتھائیں رہو۔ فجر وگ جاویں۔'' اکھے، ''جیہڑے ایلے گھوڑی آلے دیاں سوانیاں ویکھنا ہے نا اوہناں آکھناہے سِپرا نوں بدّھی لے آوندِن۔ اج نہ امدا ہویوم مُڑ آوساں۔'' مُڑ آیا دو راتیں رہیا۔

مہر سارنگ بھروانا سردار ہویا ہے جَن دا۔ ایہہ رعایا دے بندے ہوئن۔ ایس وَیر لیناہا رجوعے توں۔ اوہناں بندے مارے ہوئے ہان۔ چار اکٹھے سردار ہوئن چوٹی دے۔ محمد خان ترہانا چدھرڑ منگینی آلا، چگتا، نُور دا جپا بھوانے آلا، نُور، کندر دا سِپرا تے چوتھا مہر سارنگ۔ سارنگ آکھیا، ''دھاڑ دیونی ہے۔'' کچھی تائیں آدم اکٹھا کیتا ہویا ہے۔ ترائے ہزار بندہ آہدن دھاڑدا ہویا ہے۔ چھ وِیہاں وچ ڈھول ہویا ہے۔ مہر ہماؤں آکھیا ہویا ہا سارنگ نوں: بھترئیا جیس دیہاڑے رجوعے تے دھاڑ دیویں، چڑھدیاں راٹھاں دے مینوں مُونہہ وکھائیں۔ دیگری دا وقت ہے۔ دھاڑ تیار ہوئی کھلی ہے۔ اکھے، ''اگانہہ آ ویکھ۔'' سوٹے تے ٹُر کے آیا ہے۔ پھِردا آیا ہے۔ ویکھ کے آکھیوس، ''سارنگ! دھاڑ نہ دے۔'' ''کیوں؟'' ''سِوائے سِپرا دے کِسے دے مُونہہ تے ڈھاڈھ بلدا میں نہیں ڈِٹھا۔ ایہناں نوں ایتھوں رجوعہ تے رجوعے دے بندے نظر پئے آوندِن۔ ایہہ دھاڑ چلنا ہے۔ ایس سِپرا مری جاونا ہے۔ نہ دے دھاڑ۔'' بُڈھڑیاں دی گل جھلی کدی کِسے نہیں ۔ ٹُر پئے۔

راہ دے وچ پھنڈرِیں کوہ تے کھاوندے آئے۔ فجر دا وقت ہے۔ رجوعہ جَن لتھا ہویا ہے ٹھٹے قُریشیاں دے نال، ابھول کِیاں آہلیاں تُوں اُتے۔ رجوعہ اگانہہ دھا گیا ہویا ہے۔ ترینہہ تے چالھی بندہ کُلی رجوعے دا ہے۔ اوہناں نوں دس پَے گئی مہر سارنگ دھانا آوندا ہے تے سِپرا وی وِچ ہے۔ اوہناں میئیں محمدی نوں آکھیا، جیہدے ناں تے محمدی شریف ہے۔ ''بھئی میلا کر اج سارنگ ہٹ جاوے۔'' صُبح دا وقت ہے۔ قُرآن مجید حمائل کیتا ہویا ہے۔ فقیر اللہ دا تسبی ہتھ اِچ ہے۔ محراب متھے تے ہے۔ داڑھی مُٹھ بھر ہے۔ قلعہ کنگراں دا ٹپدن پئے۔ اگوں آ ملیا ہے مہر سارنگ نوں۔ اوس آکھیا، ''مینوں سیداں،ہرلاں، گلوتراں سارِیاں قوماں گھلیا ہے اج اوہ نہیں پھَردے۔ اج وَیر دا وٹا رکھ، مُڑ جیس دینہہ آیوں۔ میں واسطہ گھتناں خُدا دا۔'' مہر سارنگ واگ پھیری ہے۔ اوس آکھیا، ''فقیر ا ! مُڑ دُعا دے چاں۔'' بھیں پیا ہے۔ سگو ناں کوڈھن دے ہویا ہے۔ اوہ وی مہر دی واہر اِچ ہا۔ اوس آکھیا، ''ہٹیا آوناہے سارنگ۔''اکھے، ''اوہناں قرآن میلا کیتا ہے۔''ـ سگو آکھیا، ''بانہہ تیل نال چوپِڑ کے تِلاں دی ڈھیری وچ چاں منڈیے۔ جِتنے تِل بانہہ نال چمبڑ جاون اُتنے قرآن چا کے وی ویری مارنا چاہیدا ہے۔'' سَے بندے مُڑ نِکلے۔ مہر سارنگ وی واگ چاں پھیری۔ نُورے آکھیا، ''مہر لڑنا ہے۔ ''اکھے، ''ہا۔'' اکھے، ''ہِک گل یاد رکھیائے۔ قُرآن اساڈیاں جڑھاں پٹنیاں ہین۔ ایس دھاڑ تیری چلنا ہے۔ مینوں بھجن دی عادت نہیں۔ میں مری جاونا ہے۔''کسے نہ گَولی بھئی اگوں تاں آدم کوئی نہیں۔ ڈھول وت پئے وگن۔ فقیر اللہ دے بھیں کے تکیا ہے۔ اوہ تاں پیلی آوندِن۔ فقیر آکھیا ہے، ''سیداں تے ہرلاں او! قرآن دامیلا کیتا ہے۔ خُدا دا واسطہ گھتیا ہے۔ ایہہ اُچے آئن۔ جے لڑ تاں پؤ تاں انشاء اللہ تسیں داتری او۔ ایہہ گھاہ ہن۔''

اوس ویلے مُبھارا ہرل بولیا ہے۔ اوس آکھیا، ''ہرلاں دے بچیاں او! میں اج تائیں پیدل کدی ناہم ٹُریا۔ اج میں سُنیا ہے سِپرا نُورا ہے وِچ۔ میں گھوڑی گھر بنھ کے آیا ہاں مت بھَجی پوے۔موت آ کے رہنا نیہے۔ کجھ میرے ایس آئے نوں وِکھیائے۔'' ابھول، جہانے دا ہرل ہویا ہے۔ اوس ہِکسے بندے نوں آکھیا ہے، ''پِپل اُتے چڑھ کے ویکھیں نا کِتنا آدم ہے۔'' اوہ چڑھیا ہے۔ اوس آکھیا، ''مہر ابھول زمین پرتیندی آوندی ہے۔'' ابھول، جہانے دے آکھیا: اگے اسیں بندے تھوڑے ہاں۔ ایہہ اساڈے دِل گرا رہیا ہے۔ ابھول مگروں بھج کے چڑھیا ہے۔ اوس اوہدے مونہہ دے اُتے اَلُتھا ماریا ہے۔ اکھے، ''دِھی یاویا! کدی زمین وی پرتی ہے۔ مُٹھ پیادیاں دی ہے۔ اکھے زمین پر تیندی آوندی ہے۔'' ہیٹھلیاں آکھیا، ''مہر ابھول ڈھول ڈھیر وگدِن۔ آہناں ہیں مُٹّھ پیادیاں دی۔'' اکھے، ''لموچڑ ہوئے دِھی یاوے کچے بندے۔ بندے بندے دے گل ڈھولکا گھتیا ہویا نیں۔'' دِل تھہراون کان گل کیتیوس۔ لہہ آیا۔ ''ہلا سِپرا دا بھارا کون چیندا ہے؟'' اتنی دھاڑ دے وچوں ڈر سِپرا دا ڈھیر ہے۔ ابھول، جہانے دے آکھیا، ''بندوق تاں میں وگیساں۔''کالو موہل، باقر ڈاہر، قائم، سلمان دے،سلطان، بہرام دے، مالی، بہلول دے، ایہناں آکھیا، ''آگُو اسیں بنسائیں۔'' ہِک بندے کان ٹھٹا تیار ہے۔ ٹُر پئے ہین اودائیں دھاڑ آل۔

سِپرا نِکلیا ہے۔ سِپرا آکھیا ہے،''میں نُور، کندر دا۔ میرا بھار کاہیں چایا ہویا ہے؟'' جیہناں چایا ہویا ہا ہک نہیں بولیا۔ سناٹا چھا گیا۔ بخشا، ہماؤں دا ہرل ہویا ہے کریمے کا۔ بندہ کُراڑتا ہویا ہے۔ آکھیوس گل بہہ گئی۔ راٹھاں دیاں پِچھے گلاں ای تاں بچدیاں ہوئیاں۔ اوہ بھج کے نِکلیا ہے۔ اوس آکھیا ہے مہر نوں، ''میں بخشا، ہماؤں دا ہرل ہاں کریمے کیاں چوں۔ جیویں آوندا پیا ہیں لگا آویں۔ میں تیرا بھار چایا ہویا ہے۔'' بندے کِسے رجوعے دے آکھیا، ''سِپرا ویکھنا ہا تے آدم اگوں ہو گیا۔'' مُبھارے ہرل آکھیا، ''ایڈا بے چھہوا راٹھ ہے ہمیشاں دھاڑ دُشمن دی دے وچ وڑ کے لڑدا ہے۔'' ایہا گل پَے کریندے ہان جوں سِپرا دھاڑ دے وِچ آ گیا۔ بخشا، ہماؤں دا اگانہہ ہویا ہے۔ سِپرا ایتھے تلوار اُلاری ہے۔ ایسے ہتھ دے اُتے ابھول، جہانے دا کھلا ہا، اوس بندوق ماری ہے۔مُرچا وی تَرُٹ گیا، ڈولا وی ترُٹ گیا۔ ہتھ ہیٹھاں لڑِھک گیا۔ بخشا آہدا ہا: میں اگانہہ ہویا بھئی پہلی تلوار میں مار لئیں تاں میرا جگ اِچ ناں رہسی۔ میں اگانہہ ہویا ہاں۔ سِپرا کھبے ہتھ دی ڈھال مینوں ماری ہے۔ کُھتی اِچ لگی ہے پھٹ نہیں ہویا۔ میں سمجھیا ہے گڈّھے تائیں ہڈّی کائی نہیں۔ چُت زمین اِچ جا لگی ہے۔ عُمر ساری سِر میرا اِنج اِنج کریندا رہیا ہے۔ پانی پیونا ہوس ہا تاں دُوئے نوں آہدا ہا سِر نپ۔ سِپرا ایسے کھبے ہتھ نال لڑدا آوندا ہے۔ باقر ڈاہر مگروں آ کے تلوار ماری ہے۔ تلوار رگاں تائیں تردی آئی ہے۔ جھل کے تلوار سِپرا آکھیا ہے، ''شابش ہئی بھلیا۔'' سِپرا اگانہہ لڑدا جاندا ہے۔ پچھانہہ ایہہ آواز نِکل گیا ہے بھئی سِپرا مری گیا ہے۔ پچھلیاں دھاڑیں چلن لگ پئیَن۔۔آہدن: پچھوں تُپک لگی ہوئی ہے۔ سِپرا اٹھارھاں کرہیں اگانہہ لڑدا گیا۔ اُتوں آدم تلواریں آلا کڈھ ڈڑھا ہے۔ سِپرا بہہ رہیا ہے۔ جیس ایلے اِتنے کھپے ہو رہِن۔ پچھیا ہے، ''مارکا! میرا مُونہہ کِدے ہے؟'' اوہناں آکھیا، ''رجوعے نوں۔'' اکھے، ''توہاں توں اکھواؤ ہام۔ تُپک نہ لگدی تاں میں ہذُورے کر وِکھائی ہام تُہانوں۔ ایہہ نہ اکھیائے سپرا وی چل کے مویا ہے۔ میرا اجے وی مُونہہ رجوعے نوں ہے۔ ہُن سِر میرا وڈھو۔ میتھوں کجھ نہیں ہوندا۔ '' ایتھے میراثی آہدا ہے:

ٹھٹیاں دوہاںمُقابلہ ہے، ڈھول مارُو ڈکّے
تُپک مہر ابھول دی ہے، جیہنوں کُندے تے چاٹاں ہن، بنھ سُنہری ہن پکّے
اوس ماری ہے نُور سپِرا نوں، گولی بھنّ کے وِینی، رَتّ موڈھے دی چکھے
جھل کے تُپک سِپرا تِل نہیں ڈولیا، دھر قدم اگیرے رکھے
نُور سِپرا نوں پِون تلواریں، سار چیکن چپےّ

ٹھٹیاں دوہاں مُقابلہ ہے، سار ماری ہے تاڑی
تُپک ہے مہر ابھول دی، جیہڑی بہہ اُستاد سنواری
اوس دبیا ہے ماسا، تن نُور سِپرا دے ماری
نُور، کندر دا جھل کے آہدا ہے: ہائے جے اج تُپک لگ نہ جاندیوم،
کدی نہ چلدیاں دھاڑیں
پہلی تلوار سِپرا نوں، باقر ڈاہر ہے ماری
تلوار بھنّ کوپر تے رگاں، جا لئی کھکھاڑی
اُتوں ماریاں ہین قائم، سُلمان دے، سُلطان، بہرام دے، مالی، بہلول دے،
تے کالو موہل جیویں آہرن تے سٹ وداناں دی ہے نُورے نوں پین تلواریں
ویلا قہر کلور دا ہے، جھمب گڑا قہاری
کُل راٹھ رحمت گھتدا ہے سپرا نوں، کوئی مردی واری
سِپرا دا مردیاں وی سدّھا مُونہہ رجوعے نوں ہے، خلقت آہدی ہے ساری

نُور آیا ہے نارنگ نوں ساہمنا، وانگ ہاتھی مستے
آمدِن جھلی ہے نُور دی، مہر ہماؤں دے بخشے
سِپرا جھلے تے مارے، واہ لگن رستے
نُورا چنن دی گیلی ہے، کالو موہل، باقر ڈاہر، قائم، سُلمان دے،
سُلطان، بہرام دے، مالی، بہلول دے، وڈھ کے کیتا ہے تختے
کولوں دھروڑی جاندِن مہر سارنگ جنھاں دے ہٹ حوالے، لَے کھاوندِن مستے
پر راٹھ لڑدے تے مردے نی، لج اپنی دی واسطے

کناں دا سُنیا ہے، سچ ڈھا ڈھی آکھے
پہلی تلوار سِپرا نوں باقر ڈاہر دی ہے، تلوار بھنّ کوپر تے رگاں جا لگی ہے کھا کھے
اُتوں ماریاں ہن قائم، سُلمان دے، سُلطان، بہرام دے، کالُو موہل،
تے مالی، بہلول دے، جیویں ساوِن بدل اناوٹ دا ہے، بد رُوپوِن سرلاٹے
جھل مار تلواریں سِپرا رج ڈکاریا ہے، بس کیتی سُوں آپے
لوہا پت وریاماں دی، پھدھ نُور، کندر دے چایا
دھاڑیں چوں موہرے لڑدا، نُور، کندر دا جایا
آؤ کھاں وٹواں تے لالیاں او، اج کڈھ دے اُتے ہرلاں، ڈاہراں تے موہلاں،
نُور ہے مار وِکھایا
وٹّو تے لالی آہدِن: سِپرا نوں کون مریندا ہے، نُور ہے کندر دا جایا
اوس دیہاڑے مارے سِپرا دا وج چنھاویں، پر بھمب نیں نوں آیا

نُور سِپرا ویں ہے، جیویں باگیں ہے کیلا
اوس وٹواں توں بار چھُڈائی ہے، ایہناں لالیاں توں بیلا
جیس دیہاڑے ماریا ہے نُور، کندر دا، ڈُھٹُر ہویا ہے ویہلا
آہدے وٹُو تے لالی ہن: سِپرا نہیں مرِیندا نُور راٹھ ہے اربیلا
اسانوں وی ڈبھ خوشابیں ہے، مِیر پور دا بیلا


Share |


 

Depacco.com


 

 

Your Name:
Your E-mail:
Subject:
Comments:


Support Wichaar

Subscribe to our mailing list
نجم حسین سیّد
پروفیسر سعید بُھٹا
ناول
کہانیاں
زبان

 

Site Best Viewd at 1024x768 Pixels