Punjabi Wichaar
کلاسک
وچار پڑھن لئی فونٹ ڈاؤن لوڈ کرو Preview Chanel
    



مُڈھلا ورقہ >> شاہ مُکھی وچار >> پروفیسر سعید بُھٹا >> کمال کہانی >> سخی سوداگر

سخی سوداگر

سعید بُھٹا
May 20th, 2008

    آہدن: ہِک سوداگر ہویا ہے۔ اوس نوں پُتر ڈھیےہا۔ اوس دا ناں اوس سخی سوداگر رکھیا۔ مُڑ اوہنوں پڑھنے پایا۔ جیہڑے ویلے اوہ نوجوان ہو گیا تاں سخی دے پیو دے دِل وچ ایہہ رہے لڑکا میرا خوبصورت ہے۔ لائق وی ہے۔ میں شادی ایہدی کراں، جیہڑا گھرانہ میرے آر ہووے، رجیا کجیا، لڑکی ایس آر ہووے۔ ڈھیر بھنویا۔ کدائیں لڑکی اوس آر نہ ہووے گھرانہ وڈا ہووے۔ کدائیں لڑکی ہووے گھرانہ نہ ہووے۔ ہمیشاں اوہنوں تاڑ رہے۔ سوداگری تے اوہ گیا۔ ہُنر پور ٹھگ بازاں دا ہویا ہے کوئی شہر۔ اوہدے وِچ جا اُتریا۔ اوتھوں دے سوداگراں دے نال مِلیا۔ سودے سُوتر کیتے۔ اوہناں روٹی آکھی۔ اوہ گھر لَے گئے۔ اگانہہ تکیا ہے۔

    ہِک لڑکی گھر اوس دے، کائی صورت دی تصویر

بھئی پنج وقت نماز۔ قُرآن دی منزل۔ نظر نیویں کر کے ٹُرنا۔ ہولوں بولنا۔ سوداگر سخی دے پیو نوں اوہ بہوں پسند آئی۔ گھرانہ وی اوہو جیہا ہے۔ لڑکی وی اوہو جیہی ہے۔ اوس ساک چاں منگیا۔ اوہناں آکھیا، ''دو بندے اساڈے گھر نہیں۔ توں مُڑ آویں۔'' کُجھ ہاں ہو گئی۔ گھر آیا ہے۔ سخی وی بیٹھا ہے۔ سوانی نوں آکھیا ہیس، ایہہ ایہہ گل ہے۔ ایسا ساک ہے تے فلانی تاریخ نوں میں جاونا ہے۔ دُعا کریں اُمید ہے مینوں ساک ڈِھی جاسی۔ اوہ وگ گیا۔
سخی دے دِل چ آئی بھئی ایہو کُجھ اِنسان دی عُمر ہے۔ ہُن پرناؤ ہین۔ بھلکے میں وی پیو آر ہو جاونا ہے تے اج تائیں پِیر میں کوئی نہ پکڑیا بھئی میں راہ اللہ رسول دا سِکھاں۔ کیوں نہیں کہ میں کوئی پِیر پکڑاں۔ پیو اوہدا اودے گیا۔ سخی ٹُر پیا پِیر پکڑن۔ جیہڑا پِیر سُنے اوہدے کول اٹھ پہر رہے۔ اوہنوں تاڑے۔ بندہ عِلم آلا ہا۔ کِتھائیں پِیر جال لائی بیٹھے ہوون رناں نوں، کِتھائیں پِیر تعویذاں دے پُتر دیندے بیٹھے ہوون۔ اوہنوں نفرت آوے۔ ایہہ پِیری کائی نہیں۔ ڈھیر بھنویا۔ اوس نوں ایہہ یقین ہو گیا کہ پِیر کامل لبھنا ای کوئی نہیں۔ کِسے بندے اگے جُھکھیا۔ اوس آکھیا، ''نہیں جیہڑے ایلے دُنیا ہِک جیہی ہو جاونی ہے، دُنیا ختم ہو جاونی ہے۔ اوہ ڈھکی پہاڑ دی ویہدا پیا ہیں؟'' اکھے، ''ہا۔'' ایہدے پَیلے پاسے فقیر ہے۔ اوس نوں جا پرکھ۔'' اگانہہ گیا ہے لنگر پکدے پین۔ اِنجیں معلوم کیتا ہے کہ ڈھکی پہاڑ دی وی نُور ہے۔ یقین آ گیا ہے کہ پِیر کامل ہے۔ اٹھ دیہاڑے رہیا۔ اوہنوں پرکھیندا رہیا۔ عورت نوں اوتھے آون دا حکم نہیں۔
ایس آکھیا، ''مینوں مُرید کرو۔'' اوس آکھیا، ''بچیا! نوے ہزار دا پَینڈا ہے پُل صراط۔ میں تاں اپنا بھار چا کے لگھ پواں تاں لکھ شیرینی ہے۔ میں دُوئے دا بھار کیویں اُٹھائیں؟ بڑے بڑے پِیر بیٹھے نی دُنیا دے وِچ، پکڑ کوئی۔ میں نہیں کرنا۔'' ایہہ روون کڈھ ڈڑھا ہے۔ ایس آکھیا، ''گل سُن۔ اِتنا علاقہ بھَیں کے آیا بیٹھا ہاں۔ تیرے اُتے دِل یقین کیتا ہے۔ دِن قیامت دے میں تیرا دامن گِیر ہوساں کہ خُداوندا! مینوں رب رسول دا راہ ایس نہ دسیا۔'' فقیر آکھیا، ''بچیا! مُڑ تیرے جیہا اگے آیا کوئی نہیں۔ پِیر وی مُرید کولوں دُنیا منگدا ہے۔ مُرید وی جا کے پِیر کولوں دُنیا منگدا ہے۔ ہِک توں بندہ آیا ہیں جیس رب رسول دا راہ پُچھیا ہے۔ میں مُرید تینوں کریناں پر شرطاں وِچ ہے نی۔'' ''کیہڑی؟'' اکھے، ''بارھاں سال تائیں چو تا قائم کرنا ہئی۔ نماز پڑھنی ہئی۔ اِسم ذات یاد کرنا۔ ایہہ ذِکر ہئی۔ نفی پکاونا ہئی۔'' نفی اثبات کلمے نوں سدیندن۔ اِسم ذات خُدا دا اللہ ای ہے۔ دُوئیاں سبھ صفتاں سُوں۔ خیال آیا ہے پیو میرا گڈھیں گھتاون گیا ہویا ہے۔ ایہہ آہدا ہے: بارھاں سال دا چو تا قائم کر۔ میں وی ایہنوں ڈھیر تنگ کیتا ہے۔ چلو بارھاں سال تائیں شادی نہ کریساں۔ مُرید ہو گیا۔
اوتھوں ایہہ ٹُر پیا ہے۔ دُعائیں منگداآیا ہے شالا میرا پیو جباب لَے کے آوے۔ گھر آیا۔ ماں توں پُچھیا، ''پیو؟'' اوس آکھیا، ''بچیا! اوہ اجے تائیں کوئی نہیں آیا۔'' دُوآ دیہاڑا ہویا تاں پیو آ گیا۔ ویڑھے وِچ وڑدیاں ای اوس آکھیا، ''او نوکراں او! مُبھارک ہے نیں۔ سردار تُہاڈے دی فلانے دینہہ دی گڈّھ گھتا کے میں آیا کھلا ہاں، جیہڑا خرچ باب ہا اوہ میں حق مہر تائیں تار کے آیا کھلا ہاں۔'' اوہ ڈھول چِھکیندے لگے آئے۔ دھریساں وگِن لگ پئیاں۔ ایہہ حیران بھی،میں ہُن کیہ کراں۔ گڈھیں نیڑے آوندیاں جاندیاں۔ ایہہ خیال کرے بھئی میں شادی کراں، اودوں پِیر آلوں کُوڑا ہوندا ہاں۔ نہ کراں، جباب دیواں تاں پیو آلوں کُوڑا ہوندا ہاں۔ اخیر ایہہ صلاح بنائی بھئی پرنا لَے آوندا ہاں۔ سیج آلی راتیں نس ویساں۔ مُڑ میری ہو کے بیٹھی رہسی۔ بارھاں سال کٹ کے آوڑساں۔ جنج چڑھی۔ ہُنر پور ٹھگ بازاں دے جا ڈُھکی۔ اوہناں داج دان دِتے۔ کُڑی پرنا کے گھر لیاندی۔ ایس فقیری لباس اگے بنا کے رکھیا ہویا ہا۔ رات سیج دی ہے ایہہ فقیری لباس پیندا تے اللہ تیری یاری۔ وَہندا رہیا۔ فجر نوکرِیں آئیاں۔ کُڑی نوں آکھیا، ''گرم پانی تیار ہے۔ اُٹھی نھا۔'' اوس آکھیا، ''ساری رات خُدا دی کوئی کھڑک آیا ہے، میں اُٹھی بیٹھی ہاں بھئی مت اِنج نہ جانے گدھی نال میری شادی ہوئی ہے۔ میں خاوند ڈِٹھا ہی نہیں۔ میں نھاونا کیہ ہے؟'' سارے شہر چ گل ہُم ہُم ہو پئی۔ سوداگر دا لڑکا بیمار ہا نس گیا ہے۔ سس، سوہرے اوہدا ناں ''کڑمی''چاں رکھیا بھئی پُتر دا مُونہہ پئے ویہدے ہاسے، کڑمی آئی ہے تاں اوہ وی ویندا رہیا ہے۔ مگروں اوہدے پیکے آئے۔ کُڑی ساری گل سُنائی۔ اوہ لڑ بھِڑ کے، حساب کر کے لَے کے وَہندے رہے۔
سخی سوداگر جیس شہر چ جاوے عورتاں مگر ٹُر پوِن۔ ایہہ آٹا شاٹا، ٹُکر شُکر منگ کے جنگل اِچ جا رہے یاں کسے گُستان چ۔ ابادی اِچ رہے ہی نہیں۔ بارھاں سال کٹ کے ایہہ پِیر کول گیا۔ پِیر نوں جا کے آکھیا، ''میں آیا بیٹھاں ہاں بارھاں سال کٹ کے۔'' اوس آکھیا، ''وضُو کر۔'' وضُو کیتا ہے۔ پِیر مراقبے اِچ بہہ رہیا۔ مراقبے اِچ پِیر نوں اواز آیا، ایہہ اِنج ہے جیویں ماں دے عُذر چوں اج نِکلیا ہے۔ ہٹ کے پِیر ہتھ پھیریا، ''شابش بچیا۔'' پِیر دے اگے رو پیا۔ ایس آکھیا، ''جی بھار مینوں ایڈا چاں چویوئے۔ میں اِنج پرنی کے آیوم تے نس آیوم۔ بھین بھرا میرا کوئی نہیں۔ ماں پیو بُڈھا ہے۔ اوس عورت گلی گلی دے وِچ میری عِزت دھریکی ہوونی ہے۔ میں تاں گھر جاون جوگا وی کُجھ نہیں۔'' اوس آکھیا، ''بچیا! گل سُن جیہڑا اللہ واسطے اِنج کریندا ہے نا خُدا اوس دی بے عِزتی کدی نہیں کیتی۔ تُوں ایہہ یقین رکھ تیری عورت بدماشی نہیں کیتی ہوونی۔ خُدا خود حافظ ہوندا ہے اپنے پیاریاں دا۔ کِسے پیارے دی رب ایہہ بے عِزتی نہیں کرائی۔''
سوداگر اُٹھیا ہے اوتھوں۔ دِل اِچ ایہہ وے گھر میں کوئی نہیں جاونا، جِتھے ساہ مُک گئے۔ دُنیا چ پِھردا رہساں۔ کیوں کہ میں جاونا ہے تاں میں ایہہ گل سُننی ہے کہ
عورت تیری ایہہ کار کیتی ہے۔ ٹُر پیا۔ ٹُردا ٹُردا پِندا منگدا ہِک شہر چ آ وڑیا ہے۔ گرمی دا موسم ہے۔ ہاں بڑا کاہلا پیا ہے۔ سیک ہے۔ کِسے شخص نوں آکھیا ہے بھئی میں نھاونا ہا۔ دِل ہا نھاون کان تے کائی چھاں وی ہوندی۔ اوس آکھیا، ''چھائیں وی گھراں چ ہوئیاں۔ تینوں کاہیں نھاون دیونا ہے۔ اِنج لہندے لمے آلی چُنڈ تے نِکل جا۔ باگ آلاکُھوہ ہئی۔ باگ ٹھُکّا ہویا ہے۔ کُھوہ وَہندا ہے۔ اوتھے نھا وی سگدا ہیں تے چھاں وی ہئی۔'' اگانہہ گیا ہے تاں دُھپ ایسی ہائی جُوں پہلیاں چھاؤں دے ہیٹھ ہی جا کے بہہ رہیا ہے۔ لڑکا ہِک لگھیا ویندا ہا۔ اوس نوں آکھیا ہے، ''پانی دا ہِک لوٹا دے۔'' اوس آن دِتا۔ ایس گودڑی وِچھائی۔ جمیل اُتے اِنج (ہتھ دا اشارہ) مودھی کیتی ہے۔ کئیں ٹکر باجرے دے ہین۔ کئیں ٹکر سوانک دے نیں۔ کئیں منڈوہے دے۔ کوئی کنک دا۔ ایہہ اوہناں دے نال سُرِک کے کھاون لگ پیا ہے۔ خیال آیا ہے ایہہ حالت میری ماں ویکھے اوہدا کلئیا پھٹ جاونا ہے، پر حمد ہے اللہ تعالیٰ دی۔ کم چنگے اِچ لگا ہویا ہاں۔
ایہہ سَیں گیا ہے۔ کھڑک سوٹے دا سُندا رہیا ہے بھئی کائی عورت اولوں دے اُتے کپڑے دھو رہی ہے۔ سیں کے ایہہ اُٹھیا ہے۔ جُوں تکیا ہے نا کہ عورت اِتنی خوبصورت ہے ویہدیاں نال ہی فقیری گُھرل ہو گئی۔ ایہہ لاحول ولا پڑھن لگ پیا۔ ہور جیہڑا کُجھ پِیر سمجھایا ہا۔ جُوں سیت ہے تاں دِل دھرکیندا جاندا ہے۔ آکھیوس: چلو مُڑ توبہ کر لیسائیں۔ میں بولیناں ہاں ایس نوں۔ عورت کپڑے شپڑے سارے سُکنے گھتے ہین۔ آپ نھاون دی تیاری اِچ اوتھے آ بیٹھی ہے۔ ادھڑونجا اوس کیتا ہویا ہے ہِک چادر دا۔ فقیر لگا آیا ہے۔ آ کے دُوئے لاہمے اولوں دے اوہ وی بہہ رہیا ہے۔ عورت خیال کیتا ہے، بیگانا مرد ہے اوس اِنج (سِر دا اشارہ) ہیٹھاں جھٹکا لیا ہے۔ زُلفاں جیہڑیاں ہین اوہناں چوگردوں ول لیا ہے جیویں چن چودھویں دا بدل ہیٹھ آویندا ہے۔
مُونہہ وی اوس لُکا لیا۔ ایہہ بہہ رہیا ہے۔ ایہہ لگ پیا ریت مارن دنداں دے اُتے گھچ گھچ۔ وجہ کیہ ہے عورت تنگ آ کے مینوں بُلائے نا تاں مُڑ میں بولیساں۔ کائی گل کریسی تاں میں ولدا دیساں ایس نوں۔ عورت خیال کیتا ہے پتہ نہیں کِتنے تائیں ایہہ بیٹھا رہسی۔ بیگانا مرد ہے میں کیوں بُلائیں۔ اِتنے تائیں پَیراں دی میل میں لاہ لئیں۔ اوس ہِک سَرُچّا بنایا ہے۔ اوہ گِٹّا مَلن لگ پئی ہے تاں فقیر بولیا ہے۔ اوس آکھیا:
ترور پَیر پکھاوسی، مت نیور گھس جا
جیس کنتھ دی تُوں ہیں کامنی، اوہدے کیکن رہے وِہا
عورت نوں خیال آیا ہے فقیر اللہ دا ہے۔ مت میرے حق اِچ دُعا چاں کرے۔ میرا گھر آباد ہو جاوے۔ عورت اِنج کر کے وال پِچھانہہ سٹے ہین۔ اوس آکھیا:
کنتھ میرا مُسافری، پنج کھٹے دس کھا
بیل وانگوں اوہ پیٹ بھرے، اوہدیاں سُتیاں رَین وِہا
مینوں تاں اوس پُچھیا ای کدی نہیں۔ فقیر سمجھیا ہے گھروں تھڑُکّی ہوئی ہے۔ ایہہ آوندی ہے۔ فقیر آکھیا ہے:
سونے وِچ مڑھاوساں، رُپا مُول نہ انگ
گدھے کنتھ نوں چھوڑ دے، چل ہمارے سنگ
اوس آکھیا، ''فقیرا! میں سمجھیا ہا فقیر اللہ دا ہیں۔ مینوں ایہہ پتہ نہ شیطان ولھیٹیا ہویا ہیں۔
من مُنڈیا تے مُونہہ ملوانا، دِلوں خورندہ ہے راگ دا
بافندہ بردہ خُسریاں، کیہ رستہ جانے باگ دا
میں تینوں فقیر سمجھ کے آکھیا ہا، میرے حق اِچ دُعا کریسیں۔ توں آپ تیار ہویا بیٹھا
ہیں۔''
جل وِچ ڈِیوا جے بلے، دھرت اپُٹھی ہو
ماں اسانوں وت جائے، میں تاں تُمہاری ہو
فقیر بولیا ہے:
دھرم شرم گوا کے، ہُن پنچھی بھئے اُڑند
اُٹھ کُڑئیے وکھا چاں،کِتھے ہمارا رند
''میں تاں اپنا ایمان ونجائی بیٹھا ہاں۔ میں ہُن ویناں۔ مینوں راہ دس چاں۔'' وجہ کیہ ہے بھئی ایہہ اُٹھیسی میں ایہدا جُثہ ویکھساں۔ عورت آکھیا ہے:
ہتھ کراں میرے کُچ دسیون، اُٹھ کھلواں تاں سارا انگ
جِتھے سکولی لڑکے کھیڈدِن، اوہ تُمہارا ہے رند
نہ اُٹھی کے وکھینی ہاں نہ ہتھ اُتانہہ کرینی ہاں۔ ہتھ اُتانہہ کراں سِینہ ننگا ہوندا ہے۔
ایہہ ٹُر پیا ہے۔ نک وڈھیکُن آوندا ویندا ہے۔ جا بُریا! بارھاں سال خُدا تے نیک چاڑھی رکھی ہا۔ ہِکو لحظہ اِمتحان دا آیا ہئی۔ ہر شے کھڑا بیٹھا ہیں۔ ٹُر پیا ہے۔ لڑکے سکولی کھیڈدے ودِن۔ اوہناں نوں سلام دِتا ہے۔ پُچھیا ہے، ''ایس شہر دا ناں کیہ ہے؟'' اوہناں آکھیا، ''ہُنر پور ٹھگ بازاں دا۔'' ''او تیرا بھلا ہووے ایہہ تاں میرا ساہورا شہر ہے۔'' اوہناں آکھیا، ''سِر گکڑ آر مُنیا ہویا ہے۔ سوہریا تُوں اساڈا جوائی کِدوں ہیں؟'' اوس آکھیا، ''نہیں میں سخی سوداگر ہاں۔'' '' اوہ نسوکل جیہڑا نس گیا ہا۔'' اکھے، ''ہا۔'' ''ایہہ تیرا سالا کھلا ہے۔'' سالا اگانہہ ہویا ہے۔ مِلیا، ''چل بھائیا گھر چلیے۔'' ٹُر پئے۔ راہ دے وِچ سالے نوں پکا کے تکیا ہے۔ تھُن اوہدے وڈے ۔ نک بھرڈِکن۔ اکھیں جیویں کدھاں وِچ گُھکے ہوندِن۔ متھا کوئی نہ۔ کالے رنگ دا۔ ٹھڈھا ساہ بھریوس، آکھیوس:
کالے کالے کیبرے کالے جیس کے نین
جیسا دیکھیا سالا، تیسی سالے کی بھین
کُڑی دے وی ڈِنگ نِکلے ہوونے ہین ایسے آر۔ لڑکا کھلو رہیا۔ اوس آکھیا:
اُچیا لمیا گھبرُوآ دِسنا ہیں نین ملُوک
آپو اپنی ذاتیں نیں تے قادر دے ہتھ ڈور
ایہہ ضروری نہیں۔ ایہہ ہِک ہتھ ہے تے پنج انگلیں ہین۔ آپو آپ شکل ہے۔ ایس ہتھ پھیریا بھئی دانا تاں معلوم ہوندے او۔ ایہہ گھر لَے گیا ہے۔ اگانہہ گیا ہے تاں سس چرخہ پئی کتدی ہے۔ سوہرا وان بیٹھا وٹیندا ہے۔ لڑکے آکھیا، ''ایہہ سخی سوداگر جوائی ہے اساڈا۔'' سوہرے ہتھ پھیریا۔ سس ارک پھیری ہے تے ہُونگ وی نِکل گئی۔ سسوں کاوڑیاں ہوئیاں ہوون نا تاں ارک پھیریندِیاں ہین پونی آلی۔
خیر بہہ رہیا۔ ڈھیر ڈِھل ہوئی تاں تکیا ہے اوہو عورت جیہدے نال جھگڑا لائی رکھیا ہا۔ کپڑے شپڑے سُکے تاں اوہ آ گئی۔ ویڑھے آلِیاں آکھیا، ''مُبھارک ہووی اج تاں آیا بیٹھا ہے۔'' جُوں اوس بھَیں کے تکیا تاں اوس آکھیا، ''ایہہ تاں اوہو حضرت ہے جیہڑا ہُن تائیں گُھلدا رہیا۔'' ہس پئی۔ ایس وی پکا کے تکی کہ ایہہ تاں عورت ہے میری۔ رات ہو گئی۔ ایہہ بیٹھا مکان دے وِچ۔ بھُکھ وڈی وڈھیا ہویا۔ دِل وِچ آکھے اتنا زور نہ لین ہا۔ کوئی ٹُکر دے چھوڑین ہا بھئی کھانے پئے پکیندِن۔ تاں جے عورت ایہدی روٹی لَے کے آ گئی۔ تکیا ہے تاں منڈوہے دا مَن ہے اُتے ساگ رکھیا ہویا ہے۔جیویں نقشے اُتے نُون (ن) چِھکی کھلوتی ہوندی ہے۔اوس آکھیا، ''ایہہ لا۔'' ایس آکھیا، ''بارھاں سال دے بعد آیا ہاں۔ تیرے پیکے ایڈے نلجّے ہین جوں ایہہ روٹی میرے کان۔'' اوہ رو پئی۔ اوس آکھیا، ''بھِرا وڈے وکھرے ہو گئے۔ قرضے اِتنے اسا تھے ہو گئے، جائیداد اساڈی چلی گئی۔ دیہاڑے نہ رہے۔ ایہہ پرایا مکان ہے، جیس وِچ اسیں رہے ہوئے ہاں۔ جیس ویلے دا تُوں آیا ہیں پیو میرا شہر اِچ بھجّن لگا ہویا ہے۔ ایہہ کِدوں پڑوپی منڈوہے دے آٹے دی جھلی سُوں جیہڑی تیری روٹی پکائی ہے تے اساں ساگ تے گُزارہ کیتا ہے۔ بھیڑیا، بارھاں سالاں دے بعد جوں آیا ہاؤں۔ کھٹ کے میری تلی تے رکھیا کیہ ہئی جوں ہُن اُلاہمے دینا ہیں۔'' سوداگر آکھیا، ''روٹی اُٹھا لَے۔ تیرے ہتھ دی میں اوس دینہہ کھاوساں جیس دینہہ کھٹ کے تیری تلی تے رکھساں۔ میرے واسطے حرام ہے۔ میں نہیں کھاونی۔'' ہِکو جیڈِیاں نوں سدّ لے آندوس اوہناں مِنتاں ماجرے کیتے۔ اوس آکھیا، ''تُسیں لَے آؤ کھا لیساں۔ میں ایس دے ہتھ دی کھاونی ہے جیس دیہاڑے کھٹ کے ایہدی تلی تے رکھنا ہے۔''
دوویں پئے آپو آپ منجیاں تے۔ بُڈِھڑ ہِک آن کے بُوہے دے وِچ بہہ رہی بھئی ایہہ بارھاں سال دے بعد کُڑی گھبرُو لاثانی ہین۔ بہوں رات گُزر گئی۔ نہ سوداگر اوس نوں بُلایا نہ اوس، اوس نوں بُلایا۔ بُڈِھڑ باہروں بولی:
نہ کھٹ بولے نہ زیور کا چھنکار
میں جاننی ہاں تُسیں دوویں جنے پنوار
سوداگر آکھیا، ''توہیں حِصہ ونڈنا ہے تاں لگھ آ۔ مال اساڈا ہے تے دِھی آویے دھیان تیرا ہے۔'' ''ہائے ہائے کیڈا بے حیا ہے۔'' اوہ وگ گئی۔
فجر سوداگر ٹُر پیا۔ عورت مِنتاں کرن لگ پئی۔ جنڈ ہِکس دے ہیٹھ آکے کھلو رہے، ''اگے ویکھیا ہویا تینوں نہ۔ ویکھیا تے بے صبری ہو گئی۔ نہ ونج۔''
دُعا سلام دیونے، میرے یار پورایت نوں
مکھاں دِیاں جا کے مِلیاں، بھٹھ راوی دے دیس نوں
سوداگر آکھیا، ''نہیں میں ویندا ہاں۔'' ''ویندا ہیں؟'' اکھے، ''ہا۔'' ''آوسیں کدوں؟'' اکھے، ''اجوکے دیہاڑے۔'' اوس آکھیا، ''ہِک اجوکا دیہاڑا ہوندا ہے اٹھواں دیہاڑا۔ ہِک ہوندا ہے سال نوں۔ توں کدوں آوسیں؟'' اوس آکھیا، ''میں سال نوں آوساں۔'' ''کیہڑے ویلے؟'' اکھے، ''اج دے دیہاڑے دوپہر نہ ڈھلن دیساں۔ میں آ جاساں۔'' اوس آکھیا، ''ہُن میری وی سُن لا۔ اج دے دیہاڑے توں نہ آوسیں۔ میں جاننا ہیں مرگیا ہے۔ میں جلدی چخہ دے وِچ سڑ کے مر جاساؤں۔ ایہہ گل یاد رکھیں تے ہُن اللہ نوں سونپیا ہیں۔ جا۔'' سوداگر داڑھی تے ہتھ ماریا ہے۔ اوس آکھیا، ''سچ دی لتھی ہے۔ دینہہ میں ڈھلن نہ دیساں۔'' ''جا۔''، اوس آکھیا۔
جا جانا ہیں جانی ہور بنائے نی
ساڈی لگی پریت دے گھاٹے کیہڑے آئے نی
اُٹھاں وانگوں بھار چوائے نی
اوس ویلے شاہیاں چھوٹیاں ہوئیاں ہین۔ ہِک نگری دے وِچ آکے اعلان کیتا ہے کہ میں تعلیم دے سکنا ہاں۔ جے کِسے پڑھنا ہووے۔ اوس شہر دے بادشاہ سدیا ہے۔ اوس آکھیا، ''میرے دو لڑکے ہین۔ ایہناں نوں پڑھا۔ اِتنی تنخواہ۔ منجی کپڑا بِسترا مکان نوکر ایہہ میرے ذمے ہے۔'' ہور وی پڑھاون لگ پئے۔ اوہ وی پیسے دیون لگ پئے۔ عِزت ایس دی اِتنی بادشاہ دے دربار وچ، آوے سَنے بادشاہ ہر کوئی اُٹھی کھلووے، اُستاد آ گیا ہے۔ ایہناں خوشیاں دے وِچ آ کے اوہ یاد ای نہ رہے۔ بیٹھا ہے مدرسے دے وِچ تاں تلاں ہا نال۔ عورتاں ساریاں کپڑے دھوون لگ پئیاں۔ ایس پُچھیا، ''مائی، اج سارا شہر کپڑے دھوندا ہے۔کیہ وجہ ہے؟'' اوہناں آکھیا، ''پرسوں لوہی ہے۔'' ایہہ لوہی دا کارا کر آیا ہا بھئی لوہی آلے دیہاڑے میں آ جاساں۔ دوپہر نہ ڈھلن دیساں۔ ''لوہی پرسوں ہے؟'' اکھے، ''ہا۔'' جوں دھیان ماریا ہے پدھ نوں:
کئیں ہزار کوہاں دا پَینڈا، گھوڑا پل وِچ جاندا
چوتھا طبق زمیں دا آکھن، ہےگا مُلک دیاں دا
ایس یقین کیتا ہے کہ میں اپڑ سگدا ہی نہیں تے اوہ سڑکے مر جاسی۔ ایس روونا شُروع کر دِتا ہے۔ بھنے لڑکے اُستاد جی کیہ ہے نیں؟ ہِک ہِک دھپھ ماری ہے۔ ہے تُساڈی ایسی تیسی۔ گل بادشاہ تے پُہنچی بھئی اُستاد مردا ہے رو رو کے تے گل وی نہیں دسیندا۔
بادشاہ بُلایا ہے۔ بادشاہ آکھیا، ''مرض ہئی تاں علاج کریناں۔ کسے تینوں دُکھ دِتا ہے تاں اوہنوں سزا کریناں۔ کائی شے کھڑی ہا تاں میں گھروں پُوری کریناں۔ کسے عورت تے دِل ہئی تاں دس چاں۔ میں اپنا ترلا کریساں۔'' سوداگر رو پیا ہے۔ اوس آکھیا، ''ایہناں گلاں وِچوں گل کائی نہیں۔ توں بن کے پُچھنا پیا ہیں پیو۔ میرا حق ہے دسنا۔'' اوس ساری کہانی سُنائی۔ ایہہ ایہہ کار میرے نال ہے تے اوس سڑ کے مر جاونا ہے۔ اوس آکھیا، ''اُستاد، دِل تاں اِنج پیا آہدا ہے بھئی میں جلاد نوں حکم دیواں۔ تینوں پَیراں آلوں ٹکن لگے۔ او ظالما! توہیں کیہ اُستاد بننا ہیں جیہدی اپنی ایہہ حالت ہے، پر مینوں اوس لڑکی دا ارمان پیا لگد ہے۔ اوہ نہ جل کے مر جاوے۔''
بادشاہ اکٹھ کیتا ہے۔ اوس آکھیا، ''بھئی ہُنر پور ٹھگ بازاں دا کوئی جاندے ہو؟'' اوہناں آکھیا، ''جی اسیں تاں ناں اج پئے سُندے ہاں۔'' بادشاہ آکھیا، ''ایتھے اوٹھی لتھے پَین۔'' اوس ویلے ایہہ اوٹھی خانہ بدوش سدیندے ہائن بھئی گھر موڈھے تے۔ ''ایہناں دے سارے مرداں نوں لے آؤ۔ گرفتار کرو۔'' اوٹھی آ گئے۔ آدھی اسمان دی تائیں ڈھاہنگے ہتھ اِچ تے پِلیاں دے اُتے دھودھو اڑانگڑے پئے ہوئے۔ وحشی لوگ ہان۔ بادشاہ پُچھیا، ''بھئی دیس پردیس پِھردے ہو۔ ہُنر پور ٹھگ بازاں دا کوئی جاندے ہو؟'' اوہناں آکھیا، ''جی کئیں واری بھار اوتھوں لدے ہین۔ کئیں واری بھار اوتھے سٹے ہین۔ اساڈے بال وی جاندِن۔'' بادشاہ آکھیا، ''شاباش۔ کِسے دا ایسا اُٹّھ وی ہے نیں بھئی جیہڑا ایس نوں پرسوں تائیں دوپہریں ہُنر پور ٹھگ بازاں دے سٹے
تے اُٹّھ دی قیمت جیہڑی ہے میں دیناں۔'' اوہناں آکھیا، ''جی کوئی نہیں۔'' بادشاہ حُکم دِتا، ایہناں ساریاں نوں ڈھکو جیہل اِچ۔ مال ایہناں دا خزانے داخل کرو۔ اوٹھیاں آکھیا، ''وجہ؟'' اکھے، ''وجہ ایہہ وے بھئی تُسیں اوہ بندے ہو نہ کِسے دا جنازہ پڑھنا نہ کسے دا فَیتا آکھنا۔ کوئی راہ اُتے بھار سٹی کھلا ہووے تاں تُساں چوایا کدی نہیں۔ کم دا رُکھ تُساں چھوڑیا کدی نہیں۔ تُہاڈے دُنیا وِچ رہن دا فائدہ تاں کوئی نہیں۔ جیس ویلے ہر شے ڈھکن لگے اوس ویلے ہِک بُڈھا جیہا اوٹھی بولیا۔ اوس آکھیا، ''جی میرا ماہرا ہے۔ پُتر میتھے کوئی نہیں۔ میں پُتر بنا کے اوہنوں سانبھیا ہویا ہے۔ مر اوس اُنج وی جاونا ہے جے تُسیں ڈھکو تاں۔توڑا ایہدے کم آ جاوے۔ مُونہہ منگی رقم میں لَے لیساں۔ پرسوں دوپہراں تائیں ایہنوں ہُنر پور ٹھگ بازاں دے نہ سٹے موت سزا مینوں۔'' بادشاہ آکھیا، ''اُٹّھ لَے آ۔'' جیہڑے ویلے اُٹّھ آن کے کچہری چ کھلاریا ہے۔ ہر اِنسان دے مُونہوں حمد خُدا دی نِکلی ہے۔ واہ میریا اللہ جے جانور نوں وی جے صُورت دیون تے آویں تاں کیہڑی گل ہے۔ جیہڑی رقم منگی اوٹھی اوس دے چھڈی۔
اُٹّھ اوس بہایا ہے۔ ایس ماری پلاکی۔ اُٹّھ دے اُتے چڑھ گیا ہے۔ اوٹھّی ایہدا کُھرڑا نپ کے ماریا۔ کنڈ آ لگی۔ بادشاہ آکھیا، ''اُستاد نال ایہہ کیہ کیتا ہئی؟'' اوس آکھیا، ''اُستاد تاں ہے پر آپ بے اُستادا ہے۔ ونجنا ایس اوتھے ہے۔ نہ میتھوں راہ پُچھیا ہے نہ اُٹّھ دی چال پچھی سوں۔ اِنج چڑھیا ہے جیویں ایتھے دوپرا کرنا ہے۔'' بادشاہ آکھیا، ''ہلا دس۔'' اوس آکھیا، ''جی دو کُپیاں شراب برانڈی ہووے۔ دو سیخاں کباب مچھی ہووے۔ ایہہ چڑھ بہے۔ جیس ویلے میرے اُٹّھ رفتار پُوری کرنی ہے۔ ایہدیاں اکھیں چوں پانی نہیں کھلوونا۔ کھوپے دار عینک ایہدیاں اکھیں تے ہووے۔ گلے بند ایس دا کوٹ ہووے۔ جراباں ایہدے پیریں ہوون۔ ایہہ پہاڑ دی لِیہہ لَے لوے۔ اُٹّھ میرے دا جیس ویلے قدم ڈِھلا ہوون لگے ایہہ ہِک کباب چِھک کے
شراب چ سے کے اُٹّھ آل کرے۔ اُٹّھ میرا ہِلّیا ہویا ہے لَے لیسی۔ جیہڑے ویلے جانے پسلیاں آلوں ساہ پیا نِکلدا ہے۔ ہِک کباب چِھک کے شراب چ سے کے آپ کھا چھوڑے۔ جیس ویلے ایہہ دوویں چیزاں مُک جاون۔ ایہہ کھبے پاسے بھَیں آوے۔ جیہڑے ایلے اُٹّھ میرا کھلو جاوے۔ ایہہ یقین کرے کہ میں ہُنر پور اِچ پُہنچ گیا ہاں۔''
اوس ویلے ہر چیز دِتی گئی۔ ایہہ چڑھ بیٹھا۔ اُٹّھ جیہڑے ایلے رفتار پُوری کیتی ہے۔ سوداگر اِنجیں جاندا ہے کہ درخت میرے آل بھجدے آوندِن۔ جیہڑے ویلے اُٹّھ دا قدم ڈِھلا ہوون لگے۔ ایہہ ہِک کباب اوس نوں کھوا چھڈے۔ ہِک آپ کھا چھڈے۔ پہاڑ مُک گیا ہے۔ ایہہ کھبے پاسے بھَیں آیا ہے۔ تکیا ہے تاں شہر دا نام نشان وی کوئی نہ۔ دِل اِ چ گاہلیں کڈھدا ہے۔ بڑا دھوکھا کیتا ہیس۔ کُھوہ وَہندا ہے۔ اوس دے اُتے آن کے اُٹّھ ڈکیا ہیس۔ اوٹھی آکھیا ہا جیس ایلے لہن لگیں اُٹّھ نوں ہُش ہُش نہ کرے۔ کھلے اُٹّھ توں کِسے بندے نوں آکھے، مینوں چا کے لہا۔ کیوں، اُٹّھ آگا نِواونا ہے پچھوئیں جِند نِکل جاونی ہے۔ مت اُٹّھ ایہدے اُتے نہ ڈھے۔ ایہہ آپ نہ مر جاوے۔
اوہ کُھوہ تے آیا ہے۔ گدھیال نوں بُجھایا ہے۔ سلام دیون کان ارادہ کیتا ہے۔ رگاں آکھیا پرسوں دِیاں اسیں بند ہاں۔ اوس نوں اشارہ کیتا ہے۔ مینوں پانی پیوا۔ اوس لوٹا پانی دا بھر دِتا ہے۔ ایس دو گُھٹ بھرے، رگاں تر ہوئیاں۔ ''سلاما لیکم۔'' ''ولیکم۔'' اوس آکھیا، ''ہُنر پور ٹھگ بازاں دا ایتھوں کِتنا پدھ ہے؟'' اوس آکھیا، ''ایہہ باگ ویہدا پیا ہیں۔'' اکھے، ''ہا۔'' ایہہ باگ آلا کُھوہ اوسے شہر دا ہے مگر باگ دے شہر کھلا ہے۔'' اوس ویلے یاد آیا ہے ایہہ اوہا تھاہر ہے جِتھے میں سوانی نال جھگڑا کیتا ہا۔ ایس آکھیا، ''ہُن ہِک گل کر۔ مینوں چا کے لہا۔'' جٹ اوّل سوال مندا نہیں جے منے
تاں اپنا گویڑ وچ لیندا ہے۔ جٹ نپیاں مُہاراں ''ہُش ہُش۔'' اوس نمانے مسیں پَیر رکاباں چوں چِھکے۔ اُٹّھ آگا نِوایا۔ پچھوں سوداگر کَھلّے آر چِی کے دور جا ڈھٹھا۔ اُٹھّ ڈھٹھا مر گیا۔ ''ہُن ہِک گل میری من۔ دَہ روپے لَے لَے۔ میتھوں رلکیندا نہیں۔ ایس شہر اِچ جا دس سخی سوداگر آ گیا ہے۔ سوداگراں دے گھر دس۔'' اوس آکھیا، ''میں اِنجیں چاں کراں ہا۔ ایہہ ڈھگے کھلو جاونے ہین۔'' اوس آکھیا، ''گادھی تے مینوں چاں بہا۔ تُوں جا۔'' دَہ چِھک لَے۔ چا کے اوس بہایا۔ اکھے، ''باہری نوں رولی آویں۔ آندری نوں ٹٹا پوچھل دیویں۔'' اوہ وگ گیا۔ گھر جا کے سوانی نوں آکھیوس، ''ایہہ دَہ روپے نی۔ ہِک روگھل جھل گئی ہا تے دِھی یہاوے دِئیے، میں ساری رات دا ماریا ہویا ہوں تے ایہہ بُوہا بھنوا تے میں سَونا ہاں۔''
گادھی دے اُتے اوہ بیٹھا۔ اوہدا شہر آل مُونہہ۔ ویکھے جِدے ہِندو سڑدے ہان مخلوقاں اودے بھجدیَن۔ ایہہ حیران ہے کہ میں کیہ کراں۔ تاں جوں ہِک ماچھی اِنج لگھ پیا۔ اوہنوں ایس سدیا۔ ایس آکھیا، ''ایہہ کیہ ہوندا ہے پیا۔ آدم ہِکے اُرانہہ بھجدا ہے ہِکے پرانہہ۔'' اوس آکھیا، ''بھائیا! کیہ پُچھنا ہیں؟ سوداگراں دا ایہہ شہر ہا تے کوئی بندہ ایسا نہیں کہ جیس اوہناں دا نمک نہیں کھادھا۔ میں خاص کر کے نوکر ہاں۔ دیہاڑے اوہناں دے رہے نہ ایدوں ہِک دِھی دا چُڈ آیا۔ اوس آ کے اوہناں تھوں ساک چاں منگیا۔ اوہناں نِمانیاں دِتا۔ پہلی راتیں اوہ نینگرنس گیا۔ بارھاں سال کٹ کے پَر آ وڑیا۔ سوانی ایہہ ایہہ بُلارا چاں کیتا۔ سال دا کارا کر کے لوہی دا وہ وگ گیا۔ اوہ عورت آہدی ہے۔ اوہ مر گیا ہے میں سڑنا ہے۔ کئیں تماش بِین ہین کئیں روکن آلے ہین۔ میں اوہناں دا جدّی ہاں۔ سمجھیں تاں میری وی اوہ دِھی ہے، پر جمدیوں لا اصیل بڑی ہائی، پر ضدل وی بڑی ہائی۔ اوہ آہدی ہے، میں سڑنا ہے۔ ایس شہر اساڈے نوں اگ لگنا ہے۔ مُسلمان دا فرزند چخہ پیا چڑھدا ہے۔ میں تاں مُونہہ کیتی
ویناں۔'' سوداگر بولیا، ''اوہناں نوں دس جوں سخی سوداگر آ گیا ہے۔'' ''کوڑ ماراں؟'' اکھے، ''نہیں۔'' اکھے، ''میں سخی ہا۔'' ''تُوں سخی ہیں؟'' ''سو روپیہ لَے لَے تے اوہناں نوں خبرا۔'' اوس کڈھ کے ماریا اَلُتھّا۔ ایہہ گادھی دے ہیٹھ آ ڈھٹھا۔ آکھیوس، ''گندیا! اِنج وی کدی کِسے کیتی ہے۔ چڑھ میرے موڈھیاں تے۔'' سوداگر نوں ماچھی موڈھیاں تے چڑھا لیا تے بھج وگیا۔
اودوں دوپہر ہوئے کھلے ہان۔ سوداگر دی لڑکی چخہ دے وِچ بہہ کے تیل وگا کے اوس اگ چاں لائی۔ ماچھی بھجدا آوندا ہے تے آہدا ہے، کیہ سخی سوداگر آ گیا۔ اگ نہ لیائے۔ اوتھے گھماٹ ہین۔ آدم دے رُواٹ ہین۔ سُندا کوئی نہیں۔ ماچھی بار بار آہدا آوندا ہے۔ کیہ سخی آ گیا۔ اوہدی آواز کِسے نہیں سُنی۔ جیہڑی نمانی دا اوس ویلے سارا وجود کن بنیا ہویا ہا۔ اوہدے کناں تے آواز آیا ہے:
آکھ گیوں بھئی جھبدے آوساں، تے گھنیاں نی مُدتاں لائیاں
ہائے میں توہاں مار مُکائی ہاں، دیسوں دُور کرائی ہاں
دوویں مِل گئے۔ سوداگر اوہنوں لَے کے اپنے گھر آیا ہے۔ تکیا ہے ماں تے پیو کُبے ہو گئے ہین۔ رو رو کے بُرا حال۔ لوگ زکوٰۃ دیندِن تاں اوہناں دا گُزارہ ہے۔ ماں مُصلّے تے بیٹھی ہے۔ اوس مگروں آ کے تھبا بھریا ہے۔ اوس آکھیا، ''کنڈ ٹھر گئی ہے سخی تاں نُونہہ؟'' اکھے، ''اماں میں سخی ہاں۔'' اللہ دی حِکمت اوس نوں روون آیا ہے۔ چِھلکے موتیے دے پٹی گئے۔ اوہ مِل گئے۔


Share |


 

Depacco.com


 

 

Your Name:
Your E-mail:
Subject:
Comments:


Support Wichaar

Subscribe to our mailing list
نجم حسین سیّد
پروفیسر سعید بُھٹا
ناول
کہانیاں
زبان

 

Site Best Viewd at 1024x768 Pixels